دُعا

دُعا

اے خُدا اک ایسی تُو مجھ کو زندگانی دے

جو مِرے اِرادوں کو، عُمرِ جاودانی دے

بات ابھی یہ کل کی ہے ، میں تھا حرف کا حاکم
کھو چُکا ہُوں میں جس کو، پھر وہ حُکمرانی دے

آج بھی کھڑا ہوں میں، بچپنے کی سرحد پر
تُو مِری بلوغت کو، شعلہِ جوانی دے

چُپ ہوں ایک مدت سے، میری سوچ گونگی ہے
میری بے نوائی کو، تُو ہی کُچھ معانی دے

نفرتوں کا مارا ہوں، غم کا استعارہ ہوں
کم سے کم محبت کی ، مجھ کو ترجُمانی دے

ہو مقابلہ میرا، دشمنوں سے کیوں آخر
بد زباں اگر وہ ہیں ، مجھ کو خوش بیانی دے

میں قتیلؔ پہلے ہی ، قحط کا ستایا ہوں
میرے کھیت پیاسے ہیں، کوئی ان کو پانی دے

Read in Roman

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *