بانجھ موسموں کی راگنی

بانجھ موسموں کی راگنی

بسنت بھی نہیں کہ حرف رنگ لوں

پیلے پیلے رنگ میں

بہار بھی نہیں کہ پھول ٹانک لوں

کسی نئی اُمنگ میں

خزاں بھی وہ نہیں کہ خشک پتیاں

اوس میں بھگو سکوں

سماں بھی وہ نہیں کہ جس کی تلخیاں

سُرور میں ڈبو سکوں

گنگ اپنے ساز کی

ایک ایک جھانجھ ہے

کس طرح بشارتوں کا ہو جنم

جب دُلہن ہی موسموں کی بانجھ ہے

Read in Roman

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *